Imran Khan’s Article From Adyala Jail for British Journal “The Economist” [With Urdu Translation]

21
0


سابق پاکستانی وزیراعظم عمران خان نے برطانوی جریدے “دی اکانومسٹ” میں جیل سے مضمون لکھ دیا۔ عمران خان کا مکمل آرٹیکل پڑھیے۔ (اردو ترجمہ) اور انگلش مضمون دونوں ملاحظہ کیجئے۔



————-اردو ترجمہ———–
آج پاکستان میں وفاقی اور صوبائی دونوں سطحوں پر نگراں حکومتیں چل رہی ہیں۔ یہ انتظامیہ آئینی طور پر غیر قانونی ہیں کیونکہ پارلیمانی اسمبلیاں تحلیل ہونے کے 90 دنوں کے اندر انتخابات نہیں کرائے گئے تھے۔

عوام سن رہے ہیں کہ انتخابات 8 فروری کو ہونے والے ہیں۔ لیکن گزشتہ سال مارچ میں سپریم کورٹ کے اس حکم کے باوجود کہ ووٹ تین ماہ کے اندر کرائے جائیں دو صوبوں، پنجاب اور خیبرپختونخوا میں اس سے انکار کیا گیا. عوام اس بارے میں شکوک و شبہات میں مبتلا ہیں کہ آیا قومی ووٹ ہوگا یا نہیں۔

ملک کا الیکشن کمیشن اپنے عجیب و غریب اقدامات سے داغدار ہے۔ اس نے نہ صرف سپریم کورٹ کی مخالفت کی ہے بلکہ اس نے میری پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) پارٹی کی طرف سے پہلی پسند (فرسٹ چوائس) کے امیدواروں کے لیے نامزدگیوں کو بھی مسترد کر دیا ہے، پارٹی کے اندرونی انتخابات میں رکاوٹیں ڈالی ہیں اور الیکشن کمیشن پر محض تنقید کرنے پر میرے اور پی ٹی آئی کے دیگر رہنماؤں کے خلاف توہین عدالت کے مقدمات بھی چلائے ہیں۔

انتخابات ہوں یا نہ ہوں، اپریل 2022 میں عدم اعتماد کے مضحکہ خیز ووٹ کے بعد جس طرح مجھے اور میری پارٹی کو نشانہ بنایا گیا ہے، اس سے ایک بات واضح ہو گئی ہے: اسٹیبلشمنٹ، فوج، سیکیورٹی ایجنسیاں اور سول بیوروکریسی لیول ون تو چھوڑیں، کسی بھی قسم کا کھیل کا میدان ہی فراہم کرنے کیلئے تیار نہیں۔

آخر کار، یہ اسٹیبلشمنٹ ہی تھی جس نے امریکہ کے دباؤ کے تحت ہماری حکومت سے برطرفی کا کام کیا، جو ایک آزاد خارجہ پالیسی کے لیے میرے دباؤ اور اپنی مسلح افواج کو اڈے فراہم کرنے سے میرے انکار سے مشتعل ہو رہی تھی۔ میں واضح تھا کہ ہم سب کے دوست ہوں گے لیکن جنگوں کے لیے کسی کے پراکسی نہیں ہوں گے۔ میں یونہی اس فیصلے پر نہیں پہنچا، اس کی تشکیل پاکستان کو امریکہ کی “دہشت گردی کے خلاف جنگ” کے ساتھ تعاون کرتے ہوئے ہونے والے بھاری نقصانات سے ہوئی، کم از کم 80,000 پاکستانی جانیں ضائع ہوئیں۔

مارچ 2022 میں امریکی محکمہ خارجہ کے ایک اہلکار نے واشنگٹن ڈی سی میں پاکستان کے اس وقت کے سفیر سے ملاقات کی۔ اس ملاقات کے بعد سفیر نے میری حکومت کو ایک سائفر پیغام بھیجا تھا۔ میں نے بعد میں اس وقت کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے ذریعے پیغام دیکھا اور بعد میں کابینہ میں پڑھ کر سنایا گیا۔

سائفر میسج میں جو کچھ کہا گیا ہے اس کے پیش نظر، میں سمجھتا ہوں کہ امریکی اہلکار کا پیغام یہ تھا: عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے عمران خان کی وزارت عظمیٰ سے پلگ کھینچو، ورنہ۔۔۔۔۔ چند ہفتوں کے اندر ہماری حکومت کا تختہ الٹ دیا گیا اور مجھے پتا چلا کہ پاکستان کے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ، سیکورٹی ایجنسیوں کے ذریعے، ہمارے اتحادیوں اور پارلیمانی بیک بینچرز پر کئی مہینوں سے ہمارے خلاف کارروائی کر رہے تھے۔

حکومت کی اس تبدیلی کے خلاف لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور اگلے چند مہینوں میں پی ٹی آئی نے 37 میں سے 28 ضمنی انتخابات میں کامیابی حاصل کی اور ملک بھر میں زبردست ریلیاں نکالیں، جس سے یہ واضح پیغام گیا کہ عوام کہاں کھڑی ہے۔ ان ریلیوں نے خواتین کی شرکت کی اس سطح کو راغب کیا جس کی پاکستان کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ اس نے ان طاقتوں کو بے چین کر دیا جنہوں نے ہماری حکومت کو ہٹانے کا کام کیا تھا۔

ان کی گھبراہٹ میں اضافہ کرنے کے لیے، ہماری جگہ لینے والی انتظامیہ نے معیشت کو تباہ کر دیا، جس سے 18 ماہ کے اندر غیر معمولی افراط زر اور کرنسی کی قدر میں کمی واقع ہوئی۔ اس کا فرق سب کے لیے واضح تھا: پی ٹی آئی حکومت نے نہ صرف پاکستان کو دیوالیہ ہونے سے بچایا تھا بلکہ کوویڈ 19 وبائی مرض سے نمٹنے کے لیے بین الاقوامی سطح پر تعریف بھی حاصل کی تھی۔ اس کے علاوہ، اجناس کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود، ہم نے معیشت کو 2021 میں 5.8 فیصد اور 2022 میں 6.1 فیصد کی حقیقی جی ڈی پی نمو کی طرف لے جایا۔

بدقسمتی سے اسٹیبلشمنٹ نے فیصلہ کر لیا تھا کہ مجھے دوبارہ اقتدار میں آنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، اس لیے مجھے سیاسی منظر نامے سے ہٹانے کے تمام طریقے استعمال کیے گئے۔ میری زندگی پر دو قاتلانہ حملے ہوئے۔ میری پارٹی کے رہنماؤں، کارکنوں اور سوشل میڈیا کے کارکنوں کو، معاون صحافیوں کے ساتھ، اغوا کیا گیا، قید کیا گیا، تشدد کا نشانہ بنایا گیا اور پی ٹی آئی چھوڑنے کے لیے دباؤ ڈالا گیا۔ ان میں سے بہت سے لوگ بند رہتے ہیں، جب بھی عدالتیں انہیں ضمانت دیتی ہیں یا رہا کرتی ہیں تو ان پر نئے الزامات لگائے جاتے ہیں۔ اس سے بھی بدتر بات یہ ہے کہ موجودہ حکومت خواتین کو سیاست میں حصہ لینے سے روکنے کی کوشش میں پی ٹی آئی کی خواتین رہنماؤں اور کارکنوں کو ڈرانے اور دھمکانے کے لیے اپنے راستے سے ہٹ گئی ہے۔

مجھے تقریباً 200 قانونی مقدمات کا سامنا ہے اور کھلی عدالت میں عام ٹرائل سے انکار کر دیا گیا ہے۔ 9 مئی 2023 کو ایک جھوٹے فلیگ آپریشن، جس میں دیگر چیزوں کے علاوہ، فوجی تنصیبات میں آتشزدگی کا الزام پی ٹی آئی پر لگایا گیا، جس کے نتیجے میں 48 گھنٹوں کے اندر کئی ہزار گرفتاریاں، اغوا اور مجرمانہ الزامات عائد کیے گئے۔ رفتار نے ظاہر کیا کہ یہ پہلے سے منصوبہ بند تھا۔

اس کے بعد ہمارے بہت سے رہنماؤں کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا یا ان کے اہل خانہ کو پریس کانفرنسوں اور انجینئرڈ ٹیلی ویژن انٹرویوز میں یہ بتانے کی دھمکی دی گئی کہ وہ پارٹی چھوڑ رہے ہیں۔ کچھ کو دوسری، نئی بننے والی سیاسی جماعتوں میں شامل ہونے پر مجبور کیا گیا۔ دوسروں کو مجبور کیا گیا کہ وہ میرے خلاف جھوٹی گواہی دیں۔

ان سب کے باوجود، پی ٹی آئی مقبول ہے، دسمبر میں ہونے والے پٹن-کولیشن 38 کے پول میں 66 فیصد حمایت کے ساتھ۔ میری ذاتی منظوری کی درجہ بندی اس سے بھی زیادہ ہے۔ اب الیکشن کمیشن پارٹی کو الیکشن لڑنے کے حق سے محروم کرنے کے لیے ہر طرح کی غیر قانونی چالوں میں ملوث ہے۔ عدالتیں روز بروز اپنا اعتبار کھوتی نظر آ رہی ہیں۔

دریں اثنا، کرپشن کے الزام میں سزا یافتہ سابق وزیر اعظم نواز شریف برطانیہ سے واپس آ گئے ہیں، جہاں وہ پاکستانی انصاف سے مفرور کی حیثیت سے رہ رہے تھے۔ نومبر میں ایک پاکستانی عدالت نے سزا کو کالعدم کر دیا۔

میرا یقین ہے کہ مسٹر شریف نے اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ معاہدہ کیا ہے جس کے تحت وہ ان کی بریت کی حمایت کرے گی اور آئندہ انتخابات میں اپنا وزن ان کے پیچھے ڈالے گی۔ لیکن اب تک عوام پی ٹی آئی کی حمایت اور “منتخب” کو مسترد کرنے میں بے لگام رہی ہے۔

ان حالات میں 8 فروری کو انتخابات ہو سکتے ہیں۔ پی ٹی آئی کے علاوہ تمام جماعتوں کو آزادانہ انتخابی مہم چلانے کی اجازت ہے۔ میں غداری کے مضحکہ خیز الزامات میں قید تنہائی میں قید رہتا ہوں۔ ہماری پارٹی کے وہ چند رہنما جو آزاد رہتے ہیں اور انڈر گراؤنڈ نہیں ہوتے، انہیں مقامی ورکرز کنونشن بھی منعقد کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ جہاں پی ٹی آئی کے کارکن اکٹھے ہونے میں کامیاب ہوتے ہیں انہیں پولیس کی وحشیانہ کارروائی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

اس منظر نامے میں، اگر انتخابات ہوئے بھی تو وہ ایک تباہی اور ایک مذاق ثابت ہوں گے، کیونکہ پی ٹی آئی کو انتخابی مہم چلانے کے اس کے بنیادی حق سے محروم کیا جا رہا ہے۔ الیکشن کا ایسا مذاق مزید سیاسی عدم استحکام کا باعث بنے گا۔ یہ، بدلے میں، پہلے سے غیر مستحکم معیشت کو مزید بڑھا دے گا۔

پاکستان کے لیے آگے بڑھنے کا واحد قابل عمل راستہ منصفانہ اور آزادانہ انتخابات ہیں، جو سیاسی استحکام اور قانون کی حکمرانی کو واپس لانے کے ساتھ ساتھ ایک مقبول مینڈیٹ والی جمہوری حکومت کی جانب سے اشد ضروری اصلاحات کا آغاز کریں گے۔ پاکستان کے پاس اپنے آپ کو درپیش بحرانوں سے چھٹکارا پانے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں ہے۔ بدقسمتی سے جمہوریت کا محاصرہ کرتے ہوئے ہم ان تمام محاذوں پر مخالف سمت میں جا رہے ہیں۔

عمران خان پاکستان تحریک انصاف کے بانی اور سابق چیئرمین ہیں اور 2018 سے 2022 تک پاکستان کے وزیر اعظم رہے۔

ایڈیٹر کا نوٹ: پاکستان کی حکومت اور امریکی محکمہ خارجہ مسٹر خان کے پاکستانی سیاست میں امریکی مداخلت کے الزامات کی تردید کرتے ہیں۔ حکومت ان کے خلاف آفیشل سیکرٹ ایکٹ کے تحت مقدمہ چلا رہی ہے۔


[Original Article]

Today Pakistan is being ruled by caretaker governments at both the federal level and provincial level. These administrations are constitutionally illegal because elections were not held within 90 days of parliamentary assemblies being dissolved.

The public is hearing that elections will supposedly be held on February 8th. But having been denied the same in two provinces, Punjab and Khyber Pakhtunkhwa, over the past year—despite a Supreme Court order last March that those votes should be held within three months—they are right to be sceptical about whether the national vote will take place.

The country’s election commission has been tainted by its bizarre actions. Not only has it defied the top court but it has also rejected my Pakistan Tehreek-e-Insaf (pti) party’s nominations for first-choice candidates, hindered the party’s internal elections and launched contempt cases against me and other pti leaders for simply criticising the commission.

Whether elections happen or not, the manner in which I and my party have been targeted since a farcical vote of no confidence in April 2022 has made one thing clear: the establishment—the army, security agencies and the civil bureaucracy—is not prepared to provide any playing field at all, let alone a level one, for pti.

It was, after all, the establishment that engineered our removal from government under pressure from America, which was becoming agitated with my push for an independent foreign policy and my refusal to provide bases for its armed forces. I was categorical that we would be a friend to all but would not be anyone’s proxy for wars. I did not come to this view lightly. It was shaped by the huge losses Pakistan had incurred collaborating with America’s “war on terror”, not least the 80,000 Pakistani lives lost.

In March 2022 an official from America’s State Department met Pakistan’s then ambassador in Washington, dc. After that meeting the ambassador sent a cipher message to my government. I later saw the message, via the then foreign minister, Shah Mahmood Qureshi, and it was subsequently read out in cabinet.

In view of what the cipher message said, I believe that the American official’s message was to the effect of: pull the plug on Imran Khan’s prime ministership through a vote of no confidence, or else. Within weeks our government was toppled and I discovered that Pakistan’s Chief of Army Staff, General Qamar Javed Bajwa, had, through the security agencies, been working on our allies and parliamentary backbenchers for several months to move against us.

People flocked onto the streets to protest against this regime change, and in the next few months pti won 28 out of 37 by-elections and held massive rallies across the country, sending a clear message as to where the public stood. These rallies attracted a level of female participation that we believe was unprecedented in Pakistan’s history. This unnerved the powers that had engineered our government’s removal.

To add to their panic, the administration that replaced us destroyed the economy, bringing about unprecedented inflation and a currency devaluation within 18 months. The contrast was clear for everyone to see: the pti government had not only saved Pakistan from bankruptcy but also won international praise for its handling of the covid-19 pandemic. In addition, despite a spike in commodity prices, we steered the economy to real gdp growth of 5.8% in 2021 and 6.1% in 2022.

Unfortunately, the establishment had decided I could not be allowed to return to power, so all means of removing me from the political landscape were used. There were two assassination attempts on my life. My party’s leaders, workers and social-media activists, along with supportive journalists, were abducted, incarcerated, tortured and pressured to leave pti. Many of them remain locked up, with new charges being thrown at them every time the courts give them bail or set them free. Worse, the current government has gone out of its way to terrorise and intimidate pti’s female leaders and workers in an effort to discourage women from participating in politics.

I face almost 200 legal cases and have been denied a normal trial in an open court. A false-flag operation on May 9th 2023—involving, among other things, arson at military installations falsely blamed on pti—led to several thousand arrests, abductions and criminal charges within 48 hours. The speed showed it was pre-planned.

This was followed by many of our leaders being tortured or their families threatened into giving press conferences and engineered television interviews to state that they were leaving the party. Some were compelled to join other, newly created political parties. Others were made to give false testimony against me under duress.

Despite all this, pti remains popular, with 66% support in a Pattan-Coalition 38 poll held in December; my personal approval rating is even higher. Now the election commission, desperate to deny the party the right to contest elections, is indulging in all manner of unlawful tricks. The courts seem to be losing credibility daily.

Meanwhile, a former prime minister with a conviction for corruption, Nawaz Sharif, has returned from Britain, where he was living as an absconder from Pakistani justice. In November a Pakistani court overturned the conviction.

It is my belief that Mr Sharif has struck a deal with the establishment whereby it will support his acquittal and throw its weight behind him in the upcoming elections. But so far the public has been unrelenting in its support for pti and its rejection of the “selected”.

It is under these circumstances that elections may be held on February 8th. All parties are being allowed to campaign freely except for pti. I remain incarcerated, in solitary confinement, on absurd charges that include treason. Those few of our party’s leaders who remain free and not underground are not allowed to hold even local worker conventions. Where pti workers manage to gather together they face brutal police action.

In this scenario, even if elections were held they would be a disaster and a farce, since pti is being denied its basic right to campaign. Such a joke of an election would only lead to further political instability. This, in turn, would further aggravate an already volatile economy.

The only viable way forward for Pakistan is fair and free elections, which would bring back political stability and rule of law, as well as ushering in desperately needed reforms by a democratic government with a popular mandate. There is no other way for Pakistan to disentangle itself from the crises confronting it. Unfortunately, with democracy under siege, we are heading in the opposite direction on all these fronts.

Imran Khan is the founder and former chairman of Pakistan Tehreek-e-Insaf and was prime minister of Pakistan from 2018 to 2022.

Editor’s note: Pakistan’s government and America’s State Department deny Mr Khan’s allegations of American interference in Pakistani politics. The government is prosecuting him under the Official Secrets Act.

Source: The Economist

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Recent Comments

No comments to show.
Loading